24th Convocation Of Sir Syed University Of Engineering & Technology

Governor Sindh Imran Ismail, Chancellor Jawaid Anwar, Vice Chancellor Prof. Dr. Vali Uddin, Lt. Gen. (R) Moinuddin Haider, Shariq Vohra and Registrar Syed Sarfraz Ali addressing 24th Convocation of Sir Syed University.
گورنر سندھ عمران اسماعیل، سرسید یونیورسٹی کے چا نسلرجاوید انوار، وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر ولی الدین، لیفٹینٹ جنرل معین الدین حیدر، شارق ووہرہ اور رجسٹرار سید سرفراز علی سرسید یونیورسٹی کے چوبیسویں کانووکیشن سے خطاب کر رہے ہیں ۔

24th Convocation of Sir Syed University held with traditional zeal
Only those achieve high targets who have big dreams – Governor Imran Ismail
SSUET endeavored not to let situation affect academic activities in the crucial period of corona – Chancellor Jawaid Anwar
Your dreams drive you to higher levels of achievements and make life purposeful – VC Prof. Dr. Vali Uddin

KARACHI, March 27, 2021 – Sir Syed University of Engineering & Technology (SSUET), organized its 24th Convocation with traditional zeal that was attended by a large number of educationists, scholars, dignitaries including faculty and students. Governor Sindh, Imran Ismail was the chief guest of the event who participated in the convocation with his message to the students. On this memorable occasion around more than 1100 degrees were awarded to the pass-outs of BS and MS programme. Position holders were awarded with gold, silver and bronze medals for securing highest marks in the respective disciplines. Rehan Shams and Ali Akber Siddiqui received the degree of Doctor of Philosophy in Electronic Engineering.
Addressing the graduates through message at 24th SSUET Convocation Governor Sindh, Imran Ismail, said that the 40% of the students leave their homeland for better opportunities after graduation. However, today Pakistan also has many opportunities and graduates don’t need to go abroad for better prospects. Prime Minister’s Kamyab Nojwan programme not only provides them jobs but also give them chance to be the job provider. Only those achieve high targets who have big dreams and think high.
Speaking on the auspicious occasion, Chancellor of Sir Syed University of Engineering & Technology, Jawaid Anwar said that the Convocation is culmination of your tireless efforts with feeling of accomplishment in life. It is glorious occasion to cherish. It is a moment to rejoice an important landmark that gives recognition to the efforts, support and sacrifices of your parents, guardians, whether in the form of devotion of time and energy for your studies or financing studies or accumulation of responsibilities in your journey in pursuit of education.
Chancellor Jawaid Anwar pointed out that although the whole social and cultural structure has changed into a new mode of routine life due to Covid 19, yet Sir Syed University successfully endeavored not to let the situation affect the academic activities, maintaining quality performance in the crucial period of corona.
He said the concept of social reforms of Sir Syed Ahmed Khan was based upon acquisition of modern scientific education. The key ingredients of this concept were proper upbringing, character building, tolerance and coexistence. Aligarh Muslim University proved to be the laboratory where these concepts were experimented, which produced students who possessed the above traits.
Regarding construction of SSUET New Campus, Chancellor Jawaid Anwar said that the construction of the new campus of Sir Syed University will commence with the construction of the mosque at 200 acres Land of Sir Syed University at Education City.
Appreciating the efforts made by the graduates for achieving the honour, Vice Chancellor Prof. Dr. Vali Uddin said that the innovation and emerging technologies together can open up new vistas of development and prosperity for Pakistan. Sir Syed University has always endeavored to be progressive, responsive to advancement in science, engineering and technology or business management. These days there is more focus on innovation and research. It is now necessary to figure out the new demands according to the global changes, and to update the students with new academic environment.
He pointed out that Sir Syed University has been selected by HEC to be part of the World Bank funded Higher Education Data Repository – Piloting Phase Project for its exclusive performance of Online Readiness Report and timely submission of Higher Education Statistical (HES) Data.
Presenting progress report of Sir Syed University, Vice Chancellor Prof. Dr. Vali Uddin said that Sir Syed University as an important partner with Ministry of Information and IdeaGist established National Ideas Bank, inaugurated by the President Arif Alvi, to encourage all Pakistanis to innovate and develop new ideas that can solve problems faced by the citizens. The university in collaboration with Health and Social Welfare Association is preparing fully automatic prosthetic limbs. The university has signed 60 MoUs from 2016 to date with national and international organizations of different countries like China, Indonesia, Turkey, Syria and European Union. Advisory Board has been established to upgrade the syllabus and labs. The university has also joined hands with the Healthcare and Social Welfare Association (HASWA) for producing prosthetic limbs at a low cost. The university is to provide technical and strategic support for the production of automatic limbs of high quality with lower cost. The university earned 3 more International Credit Mobility (ICM) worth more than 164,300 Euros from European Union Funding (Erasmus+) in partnership with University of Malaga, Spain and Polytechnic University of Milan, Italy. Up till now, 12 Post Graduate Students and 7 Staff have availed funding from Erasmus+. A new fully integrated campus management system (CMS) has been finalized for implementation. In order to ensure that the students and faculty have access to learning and research materials, SSUET Digital Library was deployed giving them access to journals, databases, articles, and eBooks.
Vice Chancellor Prof. Dr. Vali Uddin said that today marks a memorable day for you and a significant milestone in your life’s journey. While you are entering the harsh world of reality, you do not need magic to change the world. You already have that power, especially the power to imagine better. Everyone has his own set of dreams that drive you to higher levels of achievements and make your life purposeful.
Former Governor Sindh, Lt. Gen. (R) Moinuddin Haider, said that the acquisition of knowledge is a lifelong continuous process. We need to keep a pace with fast changing world to achieve our targets.
President Karachi Chamber of Commerce and Industry, Shariq Vohra advised students not to get disappointed by the failures because failures will take you to further height.
Earlier, in his welcome address, Registrar Syed Sarfraz Ali, said that higher education has now become a tool of economic growth. Present day society needs technical skills besides education that plays an effective role in the technologically advance world. You need to update your knowledge throughout your career to cope with emerging technologies and advancements in different professional fields.
Students were also honoured with gold, silver and bronze medals for their outstanding achievements in their academic career. Mohammad Sharjeel Baig (Computer Engineering), Marium Saleem (Electronic Engineering), Rabiya Asad (Biomedical Engineering), Muhammad Basit Khan (Civil Engineering), Muhammad Usman Khan (Telecommunication Engineering), Muhammad Ahmed Gul Zaman (Electrical Engineering), Aemon Jawaid (Computer Science), Ramsha Tariq (Software Engineering), Mariyum Bashir (Bioinformatics), Bareerah Shoukat (Information Technology) and Salma Noor (Architecture) received gold medals for securing 1st position.
Recipients of silver medals for securing second position included Syeda Javeria Nadeem (Computer Engineering), Mirza Hamza Umer (Electronic Engineering), Mehar un Nisa (Biomedical Engineering), Anum Mumtaz Khan (Civil Engineering), Muhammad Shaheryar Khan (Telecommunication Engineering), Muhammad Izhan Khan (Electrical Engineering), Itrat Zehra (Computer Science), Sundus Aijaz (Software Engineering), Neha Masihuddin (Bioinformatics), Ramish ur Rehman (Information Technology) and Muhammad Talha Qureshi (Architecture). While S.M.Aalim Hussain (Computer Engineering), Melleha Rashid (Electronic Engineering), Muhammad Hamza (Biomedical Engineering), Khizar Tarique (Civil Engineering), Muhammad Imran (Telecommunication Engineering), Muhammad Adnan Khan (Electrical Engineering), Hafiz Wali ur Rehman (Computer Science), Ayesha Noor (Software Engineering), Syeda Aliza Hafiz (Bioinformatics), Shahzeen Kanwal (Information Technology) and Khadija Abdul Sattar (Architecture) were awarded bronze medals for standing 3rd position.
In the end students of Sir Syed University presented Tarana e Aligarh with live music.

 

بڑے خواب دیکھنے والے ہی بڑے کام کرتے ہیں ۔ ۔ گورنر سندھ عمران اسماعیل
زندہ قو میں اپنے اسلاف کے ورثے سے استفادہ کرتی ہیں ۔ کسی بھی ملک کا شاندار مستقبل ایک تربیت شدہ تعلیم یافتہ قوم سے منسلک ہے ۔ ۔ چانسلر جاوید انوار
خواب آپ کو کامیابی کی بلند سطح پر لے جاتے ہیں ۔ ۔ وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر ولی الدین
سرسید یونیورسٹی کے چوبیسویں کانووکیشن کے موقع پر 1100 سے زائدطلباء و طالبات کو ڈگریاں تفویض کی گئیں۔

کراچی، 27/مارچ،2021ء ۔ ۔ سرسید یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی کا چوبیسواں کانووکیشن روایتی جوش و جذبے سے منایا گیا جس میں مختلف مکاتبِ فکر سے تعلق رکھنے والی اعلیٰ علمی شخصیات کے علاوہ معززین، فیکلٹی و طلباء کی ایک کثیر تعداد نے شرکت کی ۔ تقریب کے مہمانِ خصوصی گورنر سندھ عمران اسماعیل تھے ۔ اس موقع پر تقریبا گیارہ سو سے زائدطلباء و طالبات کو ڈگریاں تفویض کی گئیں اور امتیازی نمبروں سے اول، دوئم اور سوئم پوزیشن حاصل کرنے والے طلباء و طالبات میں بالترتیب طلائی، چاندی اور کانسی کے تمغے تقسیم کئے گئے ۔ ریحان شمس اور علی اکبر صدیقی کو شعبہ الیکٹرانک انجینئرنگ میں ڈاکٹر آف فلاسفی کی ڈگریاں دی گئیں ۔

سرسید یونیورسٹی کے چوبیسویں کانووکیشن سے خطاب کرتے ہوئے مہمانِ خصوصی گورنر سندھ عمران اسماعیل نے کہا کہ گریجویشن کے بعد ۰۴فیصدنوجوان اچھے مستقبل اور ملازمتوں کے بہترین مواقع حاصل کرنے کے لیے اپنا ملک چھوڑ جاتے ہیں ۔ لیکن اب اپنے ملک میں بھی نوجوانوں کے لیے ملازمتوں کے بہترین مواقع دستیاب ہیں ۔ وہ نہ صرف اچھی ملازمتیں حاصل کر سکتے ہیں بلکہ اپنا کاروبار بھی شروع کرسکتے ہیں اور دوسروں کو ملازمتیں دے سکتے ہیں ۔ بڑے خواب دیکھنے والے ہی بڑے کام کرتے ہیں ۔

سرسید یونیورسٹی کے چانسلر جاوید انوار نے کہا کہ طلباء کی قابلیت اور مہارت نہ صرف انکی ترقی کا باعث بنتی ہے بلکہ ملک اور قوم کی بہتری اور خوشحالی کا سبب بھی بنتی ہے ۔ زندہ قو میں اپنی تاریخ پر عمارت کھڑی کرتی ہیں اور اپنے اسلاف کے ورثے سے استفادہ کرتے ہوئے مستقبل کو بہتر بناتی ہیں ۔ سرسید احمد خان برصغیر میں مسلم نشاۃ ثانیہ کے بہت بڑے علمبردار تھے ۔ سرسید کے نظام تعلیم میں شخصیت سازی اور تربیت کومرکزی حیثیت حاصل تھی جسے پسِ پشت ڈالنے کا نتیجہ ایک منتشر قوم کی صورت میں سامنے آیا ۔ اخلاقیات کے فقدان نے معاشرتی و سماجی ناہمواریوں کو پختہ کردیا ہے ۔ کسی بھی ملک کا شاندار مستقبل ایک تربیت شدہ تعلیم یافتہ قوم سے منسلک ہے ۔ قومی تعمیر نو کے لیے آج ہ میں ایسے ہی تربیتی اور تعلیمی نظام کی ضرورت ہے جو نوجوانوں کو بہترین صفات سے مرصع کرے ۔

اس یادگار موقع پر خطاب کرتے ہوئے چانسلر جاوید انوار نے کہا کہ کوویڈ کی وجہ سے نظامِ تعلیم بری طرح متاثر ہوا اور ہ میں شدیدمالی و معاشی بحران کا سامنا کرنا پڑا لیکن تمام تر نامساعد حالات کے باوجود سرسید یونیورسٹی نے نہ صرف اپنی کارکردگی کا اعلیٰ معیار برقرار رکھا بلکہ کامیابی کے سفر پر بھی تیزی سے گامزن رہی ۔

چانسلر جاوید انوار نے بتایاکہ ایجوکیشن سٹی میں دوسو ایکڑ زمین پر سرسید یونیورسٹی کے نیو کیمپس کی تعمیر کے حوالے سے بھی کافی پیش رفت ہوئی ہے ۔ جلد ہی مسجد کی تعمیر سے نیوکیمپس کی تعمیر کا آغاز ہوگا ۔

طلباء کو مخاطب کرتے ہوئے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹرولی الدین نے کہا کہ آج کا دن آپ کے لیے ایک یادگاردن ہے اور آپ کی زندگی کے سفر میں ایک اہم سنگِ میل رکھتا ہے ۔ اب آپ عملی زندگی کے دشوارگزار راستے پر قدم رکھنے جارہے ہیں جہاں آپ کو لاتعداد چیلنجز کا سامنا کرنا ہوگا جن سے نمٹنے کے لیے کسی جادوئی طاقت کی ضرورت نہیں ہے، بلکہ آپ کے پاس وہ طاقت پہلے سے موجود ہے، بہترسوچنے کی طاقت ۔ مسائل سے عہدہ برآ ہونے کے لیے آپ کی قابلیت اور مہارت کام آئے گی اورتجربات سے آپ بہت کچھ سیکھیں گے ۔ ہر شخص کے اپنے خواب ہوتے ہیں جو آپ کو کامیابی کی بلند سطح پر لے جاتے ہیں اور زندگی کو بامقصد بناتے ہیں ۔

اس موقع پر سرسید یونیورسٹی کی گزشتہ سال کی کارکردگی پر مبنیرپورٹ پیش کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ سرسید یونیورسٹی نے ایک اہم پارٹنر کے طور پر وزارتِ انفارمیشن ٹیکنالوجی اور آئیڈیا جسٹ IdeaGist کے اشتراک سے نیشنل آئیڈیاز بینک کا آغاز کیا ہے جس کا افتتاح صدر پاکستان محترم عارف علوی نے ایوانِ صدر میں منعقدہ ایک تقریب میں کیا ۔ سرسید یونیورسٹی، نیشنل آئیڈیاز بینک کی صورت میں ایک ایسا پلیٹ فارم مہیا کر رہی ہے جہاں تمام آئیڈیاز جمع کئے جائیں گے اور بعد ازاں تجارتی و کاوباری قدر رکھنے والے ایسے آئیڈیاز کو عملی جامہ پہنایا جائے گا جو قوم و ملک کی ترقی و خوشحالی کا باعث بن سکیں ۔

عالمی وبا کرونا کے باعث تعلیمی اداروں کی بندش کے نقصانات سے بچنے کے لیے سرسید یونیورسٹی نے طلباء کے لیے آن لائن کلاسوں کا اہتمام کیا اور آن لائن ایجوکیشن میں اپنی مہارت اور اعلیٰ کارکردگی کی بنیاد پر سرسید یونیورسٹی، ہائر ایجوکیشن کی ڈیٹا ریپوزیٹری Higher Education Data Repository کے لیے منتخب کی جانے والی 13جامعات میں شامل ہے ۔ یہ ورلڈ بینک کا اسپانسر شدہ پروجیکٹ ہے ۔ امتحانات، داخلے، آن لائن ایجوکیشن ، کوالٹی ایشورنس، سوشل میڈیا پالیسی سمیت پالیسیاں بنائی جاچکی ہیں اور انہیں اکیڈمک کونسل، ایف پی سی اور یونیورسٹی کے بورڈ آف گورنرز سے منظور کروالیا ۔ سرسیدیونیورسٹی اور ہیلتھ اینڈ سوشل ویلفیئر ایسوسی ایشن (HASWA) باہمی اشتراک سے خودکار مصنوعی اعضاء تیاری کریں گے تاکہ معذور افراد کی معذوری کو کافی حد تک کم کیا جائے اور ان میں اعتماد بحال کیا جائے ۔ اس ضمن میں جامعہ ٹیکنیکل مدد فراہم کرے گی ۔ جامعہ نے 2016ء سے اب تک مختلف قومی و بین الاقوامی اداروں کے ساتھ 60 مفاہمتی یادداشتوں پر دستخط کئے ہیں ۔ جن ممالک سے معاہدے ہوئے ہیں ان میں چین، انڈونیشیاء، ترکی، شام اور یورپی یونین شامل ہیں ۔ نصاب اور لیبارٹریز کی ترمیم و تجدید کے لیے ایڈوائزری بورڈ قائم کردیا گیاہے ۔ سرسید یونیورسٹی نے اسپین کی مالاگا یونیورسٹی اور اٹلی کی پولی ٹیکنک یونیورسٹی کے ساتھمل کر یورپی یونین سے 164,300 یورو مالیت کی تین مزید انٹرنیشنل کریڈٹ موبیلیٹی International Credit Mobility حاصل کرلی ہے ۔ اب تک 12 پوسٹ گریجویٹ اور 7 اسٹاف ممبرز Erasmus+سے فنڈنگ حاصل کر چکے ہیں ۔ جامعہ میں جلد ہی ایک جدید اور مربوط کیمپس مینجمنٹ سسٹم نافذکردیا جائے گا ۔ طلباء کی تحقیقی مواد و دیگر معلومات تک رسائی کو یقینی بنانے کے لیے ڈیجیٹل لائبریری قائم کردی گئی ہے جس کی وجہ سے طلباء کی رسائی جرنلز، مضامین، ڈیٹا بیس اور ای بُک تک ہوگئی ہے ۔

سابق گورنر سندھ لیفٹینٹ جنرل (ر) معین الدین حیدر نے کہا کہ علم حاصل کرنا کبھی ختم نہیں ہوتا ۔ آج دنیا میں تبدیلی کی رفتار بہت تیز ہے جس سے اپنے آپ کو ہم آہنگ کرنا بہت ضروری ہے ۔

 

کراچی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر شارق ووہرہ نے کہا کہ ناکامیوں سے کبھی مت گھبراءو یا مایوس ہو، ناکامیاں ہی آپ کی کامیابی کی راہ ہموار کرتی ہے ۔

قبل ازیں رجسٹرار سید سرفراز علی نے خیرمقدمی کلمات ادا کرتے ہوئے کہا کہ اعلیٰ تعلیم معاشی ترقی اور خوشحالی کی ضامن ہے ۔ شخصیت سازی سے ایک بہترین معاشرہ تشکیل دیا جاسکتا ہے اوررویوں کی درستگی معاشرے میں مثبت رجحانات کو فروغ دینے میں کلیدی کردار ادا کرتی ہے ۔

اول پوزیشن حاصل کرنے پر طلائی تمغہ حاصل کرنے والوں میں محمد شرجیل بیگ (شعبہ کمپیوٹر انجینئرنگ)، مریم سلیم (شعبہ الیکٹرانک انجینئرنگ)، رابعہ اسد (شعبہ بائیو میڈیکل انجینئرنگ)، محمد باسط خان (سول انجینئرنگ)، محمد عثمان خان (شعبہ ٹیلی کمیونیکیشن انجینئرنگ)، محمد احمد گل زمان (شعبہ الیکٹریکل انجینئرنگ)، ایمن جاوید (شعبہ کمپیوٹر سائنس)، رمشاء طارق (شعبہ سافٹ ویئر انجینئرنگ)،مریم بشیر (شعبہ بائیوانفارمیٹکس)، بریرا شوکت (شعبہ انفارمیشن ٹیکنالوجی اورسلمیٰ نور (شعبہ آرکیٹیکچر) شامل ہیں ۔ جب کہ دوئم پوزیشن پر چاندی کا تمغہ حاصل کرنے والوں میں سیدہ جویریا ندیم (شعبہ کمپیوٹر انجینئرنگ)، مرزا حمزہ عمر (شعبہ الیکٹرانک انجینئرنگ)، مہرالنساء (شعبہ بائیو میڈیکل انجینئرنگ)، انعم ممتاز خان (شعبہ سول انجینئرنگ)، محمد شہریار خان (شعبہ ٹیلی کام انجینئرنگ)، محمد اذہان خان (شعبہ الیکٹریکل انجینئرنگ)،عطرت ذہرہ (شعبہ کمپیوٹر سائنس)، سندس اعجاز (شعبہ سافٹ ویئر انجینئرنگ)، نیہاء مسیح الدین (شعبہ بائیو انفارمیٹکس)، رامیش الرحمن )شعبہ انفارمیشن ٹیکنالوجی اور محمدطلحہ قریشی (شعبہ آرکیٹیکچر) شامل ہیں ۔ سوئم پوزیشن پر کانسی کا تمغہ حاصل کرنے والوں میں ایس ایم عالم حسین (شعبہ کمپیوٹر انجینئرنگ)، ملیحہ راشد (شعبہ الیکٹرانک انجینئرنگ)، محمد حمزہ (شعبہ بائیو میڈیکل انجینئرنگ)، خضرطارق (شعبہ سول انجینئرنگ)، محمد عمران (شعبہ ٹیلی کام انجینئرنگ)، محمد عدنان خان (شعبہ الیکٹریکل انجینئرنگ)، حافظ ولی الرحمان (شعبہ کمپیوٹر سائنس)، عائشہ نور (شعبہ سافٹ ویئر انجینئرنگ)، سیدہ علیزہ حافظ (شعبہ بائیو انفارمیٹکس)، شاہ ذین کنول (شعبہ انفارمیشن ٹیکنالوجی) اور خدیجہ عبدالستار (شعبہ آرکیٹیکچر) شامل ہیں ۔

اختتامِ تقریب پر سرسیدیونیورسٹی کے طلباء و طالبات نے لائیو ترانہ علیگڑھ پیش کیا ۔

عبدالحامد دکنی
ڈپٹی ڈائریکٹر انفارمیشن


کیپشن: گورنر سندھ عمران اسماعیل، سرسید یونیورسٹی کے چا نسلرجاوید انوار، وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر ولی الدین، لیفٹینٹ جنرل معین الدین حیدر، شارق ووہرہ اور رجسٹرار سید سرفراز علی سرسید یونیورسٹی کے چوبیسویں کانووکیشن سے خطاب کر رہے ہیں ۔